ISLAMABAD GIRLS & BOYS HOSTEL AVAILABLE
CONTACT NO 03001277671.
https://wa.me/message/E2LYWTZNYI2JE1

ﺍﺭﺩﻭ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﺎ ﺩﺭﺳﺖ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ

User avatar
kandwal
nine stars
nine stars
Posts: 185
Joined: December 13th, 2020, 6:11 pm
Location: islamabad

ﺍﺭﺩﻭ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﺎ ﺩﺭﺳﺖ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ

Post by kandwal »

*"ﺍﺭﺩﻭ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﺎ ﺩﺭﺳﺖ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ"*

ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺑﭽﮧ ﮐﻮ ﮨﻢ ﺑﭽﮧ ﮨﯽ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ
مثلاً
ﺳﺎﻧﭗ ﮐﺎ *ﺑﭽﮧ*
ﺍﻟﻮ ﮐﺎ *ﺑﭽﮧ*
ﺑﻠﯽ ﮐﺎ *ﺑﭽﮧ*

*حالانکہ ﺍﺭﺩﻭ میں ﺍﻥ ﮐﮯ لئے ﺟﺪﺍ ﺟﺪﺍ ﻟﻔﻆ ﮨﯿﮟ۔*
ﻣﺜﻼً:
ﺑﮑﺮﯼ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ۔۔۔۔۔ *ﻣﯿﻤﻨﺎ*
ﺑﮭﯿﮍ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ۔۔۔۔۔۔۔ *ﺑﺮّﮦ*
ﮨﺎﺗﮭﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ۔۔۔۔ *ﭘﺎﭨﮭﺎ*
ﺍﻟﻮّ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ۔۔۔۔۔ *ﭘﭩﮭﺎ*
ﺑﻠﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ۔۔۔۔۔۔ *ﺑﻠﻮﻧﮕﮍﮦ*
ﮔﮭﻮﮌﯼ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ۔۔۔ *بچھیرا*
ﺑﮭﯿﻨﺲ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ۔۔۔۔۔ *کٹڑا*
ﻣﺮﻏﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ۔۔۔۔۔ *چوزہ*
ﮨﺮﻥ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ۔۔۔۔۔۔ *ہرنوٹا*
ﺳﺎﻧﭗ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ ۔۔۔۔ *سنپولیا*
ﺳﻮﺭ ﮐﺎ ﺑﭽﮧ۔۔۔۔۔۔ *گھٹیا*

*ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻌﺾ ﺟﺎﻧﺪﺍﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮﺟﺎﻧﺪﺍﺭﻭﮞ ﮐﯽ ﺑﮭﯿﮍ ﮐﮯ لئے ﺧﺎﺹ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﻘﺮﺭ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﻮ ﺍﺳﻢ ﺟﻤﻊ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ؛*
ﻣﺜﻼً:
ﻃﻠﺒﺎﺀ ﮐﯽ *ﺟﻤﺎﻋﺖ*
پرﻧﺪﻭﮞ ﮐﺎ *غول*
ﺑﮭﯿﮍﻭﮞ ﮐﺎ *ﮔﻠﮧ*
ﺑﮑﺮﯾﻮﮞ ﮐﺎ *ﺭﯾﻮﮌ*
ﮔﻮﻭﮞ ﮐﺎ *ﭼﻮﻧﺎ*
ﻣﮑﮭﯿﻮﮞ ﮐﺎ *ﺟﮭﻠﮍ*
ﺗﺎﺭﻭﮞ ﮐﺎ *ﺟﮭرﻣﭧ ﯾﺎ ﺟﮭﻮﻣﮍ*
ﺍٓﺩﻣﯿﻮں ﮐﯽ *ﺑﮭﯿﮍ*
ﺟﮩﺎﺯﻭﮞ ﮐﺎ *ﺑﯿﮍﺍ*
ﮨﺎﺗﮭﯿﻮﮞ ﮐﯽ *ﮈﺍﺭ*
ﮐﺒﻮﺗﺮﻭﮞ ﮐﯽ *ﭨﮑﮍﯼ*
ﺑﺎﻧﺴﻮﮞ ﮐﺎ *ﺟﻨﮕﻞ*
ﺩﺭﺧﺘﻮﮞ ﮐﺎ *ﺟﮭﻨﮉ*
ﺍﻧﺎﺭﻭﮞ ﮐﺎ *ﮐﻨﺞ*
ﺑﺪﻣﻌﺎﺷﻮﮞ ﮐﯽ *ﭨﻮﻟﯽ*
ﺳﻮﺍﺭﻭﮞ ﮐﺎ *ﺩﺳﺘﮧ*
ﺍﻧﮕﻮﺭ ﮐﺎ *ﮔﭽﮭﺎ*
ﮐﯿﻠﻮﮞ ﮐﯽ *ﮔﮩﻞ*
ﺭﯾﺸﻢ ﮐﺎ *ﻟﭽﮭﺎ*
ﻣﺰﺩﻭﺭﻭﮞ ﮐﺎ *ﺟﺘﮭﺎ*
ﻓﻮﺝ ﮐﺎ *ﭘﺮّﺍ*
ﺭﻭﭨﯿﻮﮞ ﮐﯽ *ﭨﮭﭙﯽ*
ﻟﮑﮍﯾﻮﮞ ﮐﺎ *ﮔﭩﮭﺎ*
ﮐﺎﻏﺬﻭﮞ کی *ﮔﮉﯼ*
ﺧﻄﻮﮞ ﮐﺎ *ﻃﻮﻣﺎﺭ*
ﺑﺎﻟﻮﮞ ﮐﺎ *ﮔُﭽﮭﺎ*
ﭘﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ *ﮈﮬﻮﻟﯽ*

*اردو میں ﮨﺮ ﺟﺎﻧﻮﺭ ﮐﯽآواز ﮐﮯ لئے ﻋﻠﯿﺤﺪﮦ ﻟﻔﻆ ﮨﮯ،*
ﻣﺜﻼ:
ﺷﯿﺮ *ﺩﮬﺎڑﺗﺎ* ﮨﮯ
ﮨﺎﺗﮭﯽ *ﭼﻨﮕﮭﺎﺭﺗﺎ* ﮨﮯ
ﮔﮭﻮﮌﺍ *ﮨﻨﮩﻨﺎﺗﺎ* ﮨﮯ
ﮔﺪﮬﺎ *ﮨﯿﭽﻮﮞ ﮨﯿﭽﻮﮞ* ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ
ﮐﺘﺎ *ﺑﮭﻮﻧﮑﺘﺎ* ﮨﮯ
ﺑﻠﯽ *ﻣﯿﺎﺅﮞ* ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ
ﮔﺎﺋﮯ *ﺭﺍﻧﺒﮭﺘﯽ* ﮨﮯ
ﺳﺎﻧﮉ *ﮈﮐﺎﺭﺗﺎ* ﮨﮯ
ﺑﮑﺮﯼ *ﻣﻤﯿﺎﺗﯽ* ﮨﮯ
ﮐﻮﺋﻞ *ﮐﻮﮐﺘﯽ* ﮨﮯ
ﭼﮍﯾﺎ *ﭼﻮﮞ ﭼﻮﮞ* ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ
ﮐﻮﺍ *ﮐﺎﺋﯿﮟ ﮐﺎﺋﯿﮟ* ﮐﺮﺗﺎﮨﮯ
ﮐﺒﻮﺗﺮ *ﻏﭩﺮ ﻏﻮﮞ* ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ
ﻣﮑﮭﯽ *ﺑﮭﻨﺒﮭﻨﺎﺗﯽ* ﮨﮯ
ﻣﺮﻏﯽ *ککڑاتی* ﮨﮯ
ﺍﻟﻮ *ﮨﻮﮐﺘﺎ* ﮨﮯ
ﻣﻮﺭ *ﭼﻨﮕﮭﺎﺭﺗﺎ* ﮨﮯ
ﻃﻮﻃﺎ *ﺭﭦ* ﻟﮕﺎﺗﺎ ﮨﮯ
ﻣﺮﻏﺎ *ﮐﮑﮍﻭﮞ کوں ﮐﮑﮍﻭﮞ ﮐﻮﮞ* ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ / *بانگ* دیتا ہے
ﭘﺮﻧﺪﮮ *ﭼہچہاتے* ﮨﯿﮟ
ﺍﻭﻧﭧ *ﺑﻐﺒﻐﺎﺗﺎ* ﮨﮯ
ﺳﺎﻧﭗ *ﭘﮭﻮﻧﮑﺎﺭﺗﺎ* ﮨﮯ
ﮔﻠﮩﺮﯼ *ﭼﭧ ﭼﭩﺎﺗﯽ* ﮨﮯ
ﻣﯿﻨﮉﮎ *ٹرّﺍﺗﺎ* ﮨﮯ
ﺟﮭﯿﻨﮕﺮ *ﺟﮭﻨﮕﺎﺭﺗﺎ* ﮨﮯ
ﺑﻨﺪر *ﮔﮭﮕﮭﯿﺎﺗﺎ* ﮨﮯ

*ﮐﺌﯽ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﮐﯽ ﺁﻭﺍﺯﻭﮞ ﮐﮯ لئے ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮨﯿﮟ*
ﻣﺜﻼ
ﺑﺎﺩﻝ ﮐﯽ *ﮔﺮﺝ*
ﺑﺠﻠﯽ ﮐﯽ *ﮐﮍﮎ*
ﮨﻮﺍ ﮐﯽ *ﺳﻨﺴﻨﺎﮨﭧ*
ﺗﻮﭖ کی *ﺩﻧﺎﺩﻥ*
ﺻﺮﺍﺣﯽ ﮐﯽ *ﮔﭧ ﮔﭧ*
ﮔﮭﻮﮌﮮ کی *ﭨﺎﭖ*
ﺭﻭپیوں کی *ﮐﮭﻨﮏ*
ﺭﯾﻞ ﮐﯽ *ﮔﮭﮍ ﮔﮭﮍ*
ﮔﻮﯾﻮﮞ کی *ﺗﺎﺗﺎ ﺭﯼ ﺭﯼ*
ﻃﺒﻠﮯ کی *ﺗﮭﺎﭖ*
ﻃﻨﺒﻮﺭﮮ ﮐﯽ *ﺁﺱ*
گھڑی کی *ٹک ٹک*
ﭼﮭﮑﮍﮮ ﮐﯽ *ﭼﻮﮞ*
ﺍﻭﺭ
ﭼﮑﯽ کی *ﮔﮭُﻤﺮ*

*ﺍﻥ ﺍﺷﯿﺎﺀ ﮐﯽ ﺧﺼﻮﺻﯿﺖ ﮐﮯ لئے ﺍﻥ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﭘﺮ ﻏﻮﺭ ﮐﯿﺠﯿﮯ*:
ﻣﻮﺗﯽ ﮐﯽ *ﺁﺏ*
ﮐﻨﺪﻥ ﮐﯽ *ﺩﻣﮏ*
ﮨﯿﺮے ﮐﯽ *ﮈﻟﮏ*
ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ ﮐﯽ *ﭼﻤﮏ*
ﮔﮭﻨﮕﮭﺮﻭ ﮐﯽ *ﭼﮭُﻦ ﭼﮭُﻦ*
ﺩﮬﻮﭖ ﮐﺎ *ﺗﮍﺍﻗﺎ*
ﺑﻮ ﮐﯽ *ﺑﮭﺒﮏ*
ﻋﻄﺮ ﮐﯽ *ﻟﭙﭧ*
ﭘﮭﻮﻝ ﮐﯽ *ﻣﮩﮏ*

*ﻣﺴﮑﻦ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺍﻟﻔﺎﻅ*
ﺟﯿﺴﮯ
ﺑﺎﺭﺍﺕ ﮐﺎ *ﻣﺤﻞ*
ﺑﯿﮕﻤﻮﮞ کا *ﺣﺮﻡ*
ﺭﺍﻧﯿﻮﮞ ﮐﺎ *ﺍﻧﻮﺍﺱ*
ﭘﻮﻟﯿﺲ ﮐﯽ *ﺑﺎﺭﮎ*
ﺭﺷﯽ ﮐﺎ *ﺁﺷﺮﻡ*
ﺻﻮﻓﯽ ﮐﺎ *ﺣﺠﺮﮦ*
ﻓﻘﯿﮧ ﮐﺎ *ﺗﮑﯿﮧ ﯾﺎ ﮐﭩﯿﺎ*
ﺑﮭﻠﮯ ﻣﺎﻧﺲ ﮐﺎ *ﮔﮭﺮ*
ﻏﺮﯾﺐ کا *ﺟﮭﻮﻧﭙﮍﺍ*
ﺑﮭﮍﻭﮞ ﮐﺎ *ﭼﮭﺘﺎ*
ﻟﻮﻣﮍﯼ کی *ﺑﮭﭧ*
ﭘﺮﻧﺪﻭﮞ ﮐﺎ *ﮔﮭﻮﻧﺴﻠﮧ*
ﭼﻮﮨﮯ ﮐﺎ *ﺑﻞ*
ﺳﺎﻧﭗ ﮐﯽ *ﺑﺎﻧﺒﯽ*
ﻓﻮﺝ ﮐﯽ *ﭼﮭﺎﻭﻧﯽ*
ﻣﻮﯾﺸﯽ ﮐﺎ *ﮐﮭﮍﮎ* ،۔۔۔۔

*اردو لکھتے ہوئے درست الفاظ کا استعمال تحریر کو چار چاند لگا دیتا ہے۔۔*

*ضروری التماس ●*
*ہماری زبان اردو کیا ہی خوبصورت زبان ہے مگر بدقسمتی سے اب ہم اپنی زبان کی خوبصورتی کو بھولتے جارہے ہیں اور اردو کے لاتعداد الفاظ پرانی کتابوں کے قبرستان میں دفن ہوتے جارہے ہیں۔*

*بدقسمتی سے بے شمار الفاظ اب ہماری روزمرہ کی زبان میں استعمال نہیں ہوتے اور ہماری نئی نسل اب ان الفاظ سے ناواقف ہوتی جارہی ہے*

*جہاں تک ممکن ہو سکے ہمیں اردو زبان کی ترویج و اشاعت میں فرداً فرداً حصہ لیتے رہنا چاہیئے*

منقول


Who is online

Users browsing this forum: No registered users and 1 guest